Tuesday, 8 January 2008

رائیگاں جانے کا دکھ

رائیگاں جانے کا دکھ
ہر لمحہ گئے لمحے کا دکھ
جو گزشتہ ہے وہ آئندہ نہیں
اور آئندہ کبھی پایا نہیں
کچھ اگر پایا تو فقط
رائیگاں جانے کا دکھ

۔۔عبید اللہ علیم

3 comments:

  • امید says:
    19 January 2008 at 12:49

    یہ نظم تو سوچ میں ڈال رہی ہے

  • امید says:
    19 January 2008 at 12:49

    یہ نظم تو سوش میں ڈال رہی ہے

  • Virtual Reality says:
    19 January 2008 at 13:54

    السلام علیکم امید
    ہے ناں؟؟؟ میں بھی ابھی تک اسی سوچ میں گم ہوں :)

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔