Saturday, 12 January 2008

وی آئی پی موومنٹ



وی آئی پی موومنٹ




اندھیر نگری کے راستوں پر لگے ہیں پہرے
تنی ہے زنجیرِ جبر جس پر
تنی ہے سیاہ تختی
سیاہ تختی جس پر سُرخ لفظوں سے لکھا ہے
کوئی نہ  گزرے کہ شاہِ دوراں گزر رہے ہیں
یہ حکم پڑھ کر ہر ایک ساعتِ مؤدبانہ ٹھہر گئی ہے
سبھی کے ہونٹوں کو چپ لگی ہے
مگر اک آواز آ رہی ہے
اُکھڑتی سانسوں کی، سسکیوں کی
کراہ کی، آخری ہچکیوں کی
یہ جان دیتی ہوئی مریضہ
اندھیر نگری کے رہنے والوں کی آرزو ہے
یہ عدل و انصاف اور مسافت کے اجالوں کی آرزو ہے
اک آرزو جو اندھیر نگری کی بند راہوں پہ مر گئی ہے
ادھر یہ جاں سے،

اُدھر شہنشاہ کی سواری بڑی اماں سے گزر گئی ہے


۔۔۔محمد عثمان جامعی


 

0 comments:

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔