Tuesday, 25 September 2007

جو ملے تھے راستے میں

مجھے کہیں آنا جانا ہو تو گھر سے نکلتے ہی میرا پسندیدہ مشغلہ آس پاس کے لوگوں کا مشاہدہ کرنا ہے۔۔ اگر کوئی ساتھ ہو تو ہماری بحث شروع ہو جاتی ہے کہ فلاں بندہ اس وقت کیا سوچ رہا ہو گا۔۔یا اپنے حلیے سے کیسا لگتا ہے وغیرہ وغیرہ۔۔اگر تو میرا بھائی ساتھ ہو تو آخر میں ہم دونوں کی ایک نئی بحث شروع ہو جاتی ہے اور وجہ بحث کہیں پیچھے رہ جاتا ہے۔۔ :grin:
اور اگر میں اکیلی ہوں تو میں کسی ایک کے بارے میں ہی اندازہ لگاتی رہ جاتی ہوں اور سفر ختم بھی ہو جاتا ہے۔ :)کل بھی ایسا ہی ہوا۔۔میں لائبریری جا رہی تھی۔۔۔ کہ راستے میں کراسنگ پر ایک ٹین ایجر بچے کو بھاگتے دیکھا اور اس کے پیچھے ایک سیکوریٹی گارڈ بھی ٹریفک کی پروا کئے بغیر بھاگ رہا تھا۔۔سیکوریٹی گارڈ نے اس کو پکڑ لیا اور میں یہ سوچنے لگی اس نے کیا کیا ہوگا؟؟ اور کیوں کیا ہو گا؟؟یقیناً اس کے گھر کے حالات اچھے نہیں ہوں گے یا پھر یہ emotionally upset teenager گروپ میں سے ہو گا جس کے بارے میں برطانوی حکومت اور ذرائع ابلاغ اکثر پریشان ہوتے رہتے ہیں(میں نے دیکھا ہے کہ پریشان ہونا یہاں لوگوں کا پسندیدہ مشغلہ ہے) :grin: ۔۔۔ خیر یہ سوچتے ہوئے مجھے خیال آیا کہ میں تو لائبریری پہنچنے والی ہوں ۔۔چنانچہ میں نے پھر آگے پیچھے نظر دوڑائی تو ایک انکل اور آنٹی شاپنگ سنٹر کی طرف جا رہے تھے۔۔ میں نے سوچا لگتا ہے آج آنٹی نے اپنے مجازی خدا کی جیب خالی کرنے کا ارادہ کیا ہے ۔۔لیکن وہ دونوں اتنے مزے سے گپ شپ کر رہے تھے کہ مجھے اپنے خیال کی خود ہی تردید کرنی پڑی۔۔اس لئے کہ میں نے دیکھا ہے کہ عموماً بیگمات کے ساتھ شاپنگ کرنا شوہران کے لئے کافی بورنگ کام ہوتا ہے۔۔ ہو سکتا ہے وہ شاپنگ کرنے نہیں جا رہے ہوں۔خیر آگے آئی تو دو پاکستانی خواتین نظر آئیں۔۔ دونوں شاپنگ کر کے واپس جا رہی تھیں اور اتنے سارے بیگز اٹھائے بمشکل چل رہی تھیں۔۔میں نے سوچا پاکستان میں تو یہ کبھی بھی اتنی دور سے اتنا سامان اٹھا کر پیدل واپس نہ جاتی ہونگی۔۔ خیر اگلی آدھی ملاقات ایک بہت ہی معمر خاتون سے ہوئی جو آہتسہ روی سے بس سٹاپ کی طرف جا رہی تھیں۔۔ ہمارے یہاں ان کے ہمعمر لوگوں کو گھر بٹھا دیا جاتا ہے کہ یہ عمر آرام کرنے کی ہے باہر کے کام گھر والے اپنے ذمے لے لیتے ہیں۔۔ یہ سوچتےسوچتے میں لائبریری پہنچ گئی اور وہاں داخل ہوتے میرا سامنا ایک hoodie طالبعلم سے ہوا۔ پھر میری ذہنی رو بہک گئی کہ اگر حجاب اور ہُڈ دونوں کا مقصد سر ڈھانپنا ہے تو اول الذکر کے بارے میں اس قدر جانبداری کا رویہ کیوں؟؟؟ ابھی میں اس سوال کا جواب سوچ ہی رہی تھی کہ میری باری آ گئی اور ہمیشہ کی طرح میری اس سوچ کا سلسلہ بھی منقطع ہو گیا۔۔

2 comments:

  • راہبر says:
    9 October 2007 at 04:26

    بڑے عرصہ بعد آپ کے بلاگ پر نظر پڑی اور حسبِ سابق ایک اچھی تحریر پڑھنے کو ملی۔ اس طرح کے مشاہدات ہماری زندگی میں بہت اہم ہوتے ہیں اور اگر ہم چاہیں تو ان سے فائدہ بھی اٹھاسکتے ہیں۔
    حجاب کے معاملہ میں جانبداری واقعی بے حد افسوس ناک ہے۔ یہ دو روابط دیکھیں:
    سنگاپور حکومت کی منافقت
    باحجاب خواتین کے لیے

  • Virtual Reality says:
    10 October 2007 at 17:52

    بہت شکریہ عمار۔۔
    مغرب کے انتہائی روشن خیال لوگ بھی کہیں نہ کہیں حجاب کے بارے میں معتصبانہ رویے کا اظہار کر جاتے ہیں۔۔
    دونوں روابط کا بہت شکریہ۔۔سنگاپور کے ساتھ ساتھ فرانس کا نام اس سلسلے میں سرِ فہرست ہے۔۔ اور سامی یوسف کا گانا پوسٹ کرنے کے لئے بہت شکریہ

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔