Wednesday, 31 December 2008

لاپرواہ کون؟

دو دن پہلے قاسم راجا  نے برمنگھم اپئرپورٹ  سے اسلام آباد ایئرپورٹ تک سفر کیا اور پھر انہیں واپس بھیج دیا گیا۔ کیونکہ موصوف جلدی میں اپنے بجائے اپنی بہن کا پاسپورٹ اٹھا کر لے آئے ۔ برمنگھم ایئرپورٹ کے عملہ شاید ان سے بھی زیادہ جلدی میں تھا۔ دو جگہ پاسپورٹ چیک کیا گیا لیکن کسی کو پتہ نہیں چلا کہ ان کے سامنے کھڑے مسٹر قاسم راجا کے پاسپورٹ پر ’مس‘ کیوں لکھا ہوا ہے :daydream ، نہ ہی تصویر میں کوئی فرق دکھائی دیا۔  بہرحال اسلام آباد ایئرپورٹ والے جلدی میں نہیں تھے اس لئے انہیں یہ فرق نظر آ گیا  :kool اور بیچارے قاسم کو واپس گھر لوٹنا پڑا۔

تفصیل یہاں دیکھیں ۔

پاکستانیوں کی لاپرواہی کا ڈھنڈورا ایسے ہی پیٹا جاتا ہے۔ یہاں تو معاملہ الٹ نکلا۔ :D

مکمل تحریر  »

Sunday, 28 December 2008

عذرا کی گڑیا

کہتے ہیں  انسان کتنا ہی بڑا ہو جائے اس کے اندر ایک بچہ چھپا بیٹھا رہتا ہے۔ شاید اسی لیے مجھے بھی ابھی تک بچوں کی دنیا اپنی بڑوں والی دنیا سے زیادہ اچھی لگتی ہے۔ بچوں کے کارٹونز،  فلمیں، نظمیں اور کہانیاں میرے لئے بھی اتنی ہی کشش رکھتی ہیں جتنی میرے چھوٹو بھتیجے کے لئے   :shy:

انٹرنیٹ کی دنیا میں ہمیں اردو ادب تو کافی مل جاتا ہے لیکن اس میں بچوں  کا ادب آٹے میں نمک کے برابر ہے۔ اسی طرح اردو میں اینی میٹڈ کہانیاں اور نظمیں بھی  نہ ہونے کے برابر ہیں :-(

البتہ یہ خوشی کی بات ہے کہ اس سلسلے میں سنجیدگی سے کام کیا جا رہا ہے جس کی ایک مثال ’عذرا کی گڑیا‘ ہے۔ جو عمار اور شعیب سعید شوبی کی مشترکہ  ابتدائی کاوش ہے۔ امید ہے کہ عمار اور شوبی اس سلسلے کو جاری رکھیں گے اور جلد ہی ہمیں مزید اینی میٹڈ ویڈیوز دیکھنے کو ملیں گی۔





شکریہ عمار اور شوبی۔ اور اس سلسلے کو روکنا نہیں پلیز :)

مکمل تحریر  »

Friday, 26 December 2008

اے قائدِ اعظم تیرا احسان ہے احسان!!

مکمل تحریر  »

Wednesday, 24 December 2008

کیوں بھلا؟

عوامی پارٹیوں  کی  قیادت "خواص" پر ہی کیوں مشتمل ہوتی ہے؟

بیک وقت لقمۂ اجل بننے والوں میں سے ایک ’شہید‘ اور باقی ’ہلاک شدگان‘ کیوں؟

اپنی  وزارتِ عظمیٰ کے دوران قتل ہونے والے وزیرِ اعظم  کے بجائے ایک سابق وزیرِ اعظم کی برسی سرکاری طور پر کیوں منائی جاتی ہے؟

مکمل تحریر  »

Saturday, 20 December 2008

پاکستان 2008

آمریت ہو یا جمہوریت۔ حالات بدلتے ہیں تو صرف حکمرانوں کے۔ پاکستانی عوام کے لئے  ۲۰۰۷ اور ۲۰۰۸ ایک سے ہیں۔


غلام بستی


چار سُو اندھیرے ہیں، روشنی نہیں ملتی




غربتوں کے ڈیرے ہیں، زندگی نہیں ملتی


بے بسی کے آنگن میں اب خودی نہیں ملتی


راستہ محبت کا بند اک گلی جیسا، نفرتوں کی وسعت میں


وہ گلی نہیں ملتی۔۔۔ زندگی نہیں ملتی۔۔۔۔۔ زندگی نہیں ملتی


بھوک اور عسرت کا درد جھیلتے ہیں ہم


بے بسی، غلامی کی راہ کھولتے ہو تم



راکھ اور شعلوں کا کھیل کھیلتے ہو تم


جس غلام بستی کو، زیرِ بار بستی کو


غربتوں کے مسکن کو، بے بسی کے آنگن کو


تم نے "فتح" کر ڈالا (واہ، کیا بہادر ہو!)


خود ہی تم بناتے ہو۔۔۔




اس غلام خلقت کی ہڈیوں کے ڈھانچوں پر، بدنصیب تربت پر


اپنے اونچے چوبارے


خود ہی پھر گراتے ہو، خاک یوں اڑاتے ہو


روز تم جلاتے ہو، اِس غلام بستی کے سر بریدہ تن ، جن کو


راکھ پھر بناتے ہو، (راکھ اور شعلوں کا کھیل کھیلتتے ہو تم!)


راکھ بھی ہماری ہی کام آ رہی ہے آج


اس کو بیچ کر "جاں باز"


ایک اور بم لے لے


اس غلام بستی کو، زیرِ بار بستی کو


غربتوں کے مسکن کو ، بے بسی کے آنگن کو


پھر سے تُو "فتح" کر لے، اس غلام بستی کو!


جس غلام بستی کے چار سُو اندھیرے ہیں


اور ان اندھیروں میں


روشنی نہیں ملتی۔۔۔روشنی نہیں ملتی۔۔۔


(عینی سیدہ)



مکمل تحریر  »

Tuesday, 16 December 2008

اہم اعلان

مجھے ابھی ابھی معلوم ہوا ہے کہ میرے بلاگ نے انٹرنیٹ ایکسپلورر سے پردہ کرنا شروع کر دیا ہے شاید۔۔ کیونکہ مجھے مین پیچ پر ڈیڑھ پوسٹ کے سوا کچھ بھی نظر نہیں آ رہا۔ جبکہ فائر فاکس میں سب کچھ اپنی جگہ پر ملتا ہے۔
بھولے بھٹکے وزیٹرز سے درخواست ہے کہ اگر ان کو بھی صرف ایک آدھ پوسٹ ہی نظر آئے تو براؤزر تبدیل کر لیں یا اسی پوسٹ کو تفصیلا دیکھنے کے لیے کلک کریں۔ اگلا صفحہ درست حالت میں ملے گا۔ پہلا صفحہ بہرحال نامکمل ہی دکھے گا۔
بلاگ گروز، آپ کی مدد کی ضرورت ہے،  پلیز۔ اگر اس مسئلے کی وجہ اور حل بتا سکیں تو۔ بدلے میں آپ کے بلاگ کی ٹریفک میں ریکارڈ اضافے کی دعا کروں گی۔ :pray

مکمل تحریر  »

Monday, 15 December 2008

توقعات

"اگر زندگی میں سکون چاہتے ہو تو کسی سے توقع نہ رکھو کہ توقع کا پیالہ ہمیشہ ٹھوکروں کی زد میں رہتا ہے۔"


(اشفاق احمد)

مکمل تحریر  »

Sunday, 14 December 2008

ٹیگ: عید نامہ



ساجد اقبال نے عید کے حوالے سے   ٹیگ سلسلہ شروع کیا کہ بلاگرز ایک دوسرے کو بتا سکیں کہ ان کے علاقے میں عید کس طرح منائی جاتی ہے۔ اس سلسلے میں مجھے بھی ٹیگ کیا۔ پہلے تو معذرت کہ میں تھوڑی لیٹ ہو گئی۔ اس کی وجہ پورا ہفتہ ۹۔۵ مصروفیت اور نزلہ زکام کا ہمہ وقت ساتھ تھا۔  اب ہفتے کے آخیر میں دونوں سے فرصت ملی ہے تو میں اپنی پوسٹ کے ساتھ حاضر ہوں۔


برطانیہ میں اگرچہ عید پاکستان کی نسبت پھیکی ہی ہوتی ہے لیکن جن علاقوں میں مسلمانوں یا پاکستانیوں کی اکثریت ہے،  وہاں ٹھیک ٹھاک  گہماگہمی دیکھنے کو ملتی ہے۔


قربانی کا انتظام:



عید الضحیٰ کا ذکر کرتے ہوئے پہلے قربانی کی بات کرتے ہیں۔
زیادہ تر لوگ وطن میں قربانی کرنے کو ترجیح دیتے ہیں۔ چنانچہ یا تو  پاکستان میں مقیم رشتہ داروں کو رقم بھجوا دی جاتی ہے تاکہ ان کی طرف سے قربانی دی جا سکے یا پھر فلاحی تنظیموں کی خدمات حاصل کی جاتی ہیں۔

کچھ یہاں بھی قربانی کرتے ہیں۔ خصوصاً جن خاندانوں میں  تمام یا زیادہ  قریبی گھرانے یہاں مقیم ہیں۔ ایسے خاندانوں میں ایک دو گھرانے یہیں قربانی کا انتظام کر لیتے ہیں تا کہ صحیح معنوں میں عید منائی جا ئے اور نئی نسل بھی قربانی کی اہمیت کو جان سکے۔ جبکہ خاندان کے باقی گھرانے پاکستان میں انتظام کر دیتے ہیں ۔ قربانی کا انتظام مقامی اسلامک سنٹر یا مسلم کمیونٹی تنظیم کے زیرِ انتظام ہوتا ہے جو جانور کی خریداری سے قربانی کے گوشت کی تقسیم اور ترسیل تک کے انتظامات کی نگرانی کرتے ہیں۔


یومِ عید:



چونکہ عید کا دن بھی ورکنگ ڈے ہی ہوتا ہے اس لئے عید منانے کے انداز بھی مختلف ہیں۔
سکولوں میں چھٹی تو نہیں ہوتی لیکن مسلم اکثریت والے علاقوں میں کچھ مقامی سکول (عام طور پر پرائمری) مسلم طلبا کو چھٹی دے دیتے ہیں۔ لیکن سیکنڈری سکولز، کالجز یا یونیورسٹیز میں معمول کی کلاسز ہوتی ہیں۔

جو لوگ اپنا کاروبار کرتے ہیں عید کے دن چھٹی کرنا ان کے لئے کوئی مسئلہ نہیں ہوتا یا پھر وہ اپنے کام کے اوقاتِ کار میں کچھ اس طرح رد و بدل کرتے ہیں کہ عید بھی منائی جا سکے اور کام کا بھی حرج نہ ہو۔


ملازمت کرنے والے افراد کے لئے بھی عید کے موقع پر چھٹی کرنا اتنا مسئلہ نہیں ہوتا کہ اکثر لوگ اپنی چھٹیاں انہی تہواروں کے لئے بچا کر رکھتے ہیں اور  یوں ان کو عید پر چھٹی مل جاتی ہے۔ لیکن ایسا عموما وہ لوگ کرتے ہیں جو عید نہایت اہتمام سے مناتے ہیں یا جو اپنے خاندان کے ساتھ یہاں مقیم ہیں۔ ورنہ زیادہ تر لوگ عید کے دن بھی اپنے اپنے کام پر ہوتے ہیں۔


اکیلے رہنے والے جیسے پڑھائی یا ملازمت کے سلسلے میں یہاں مقیم لوگوں کے لئے عید کا دن عام دنوں جیسا ہی ہوتا ہے چنانچہ وہ چھٹی نہیں کر پاتے اور ان کی عید زیادہ سے زہادہ عید کی نماز پڑھنے اور  فون پر دوسروں کو عید مبارک کہنے تک محدود رہتی ہے۔



نمازِعید :

لندن میں نمازِ عید کا سب سے بڑا اجتماع ریجنٹ پارک مسجد میں ہوتا ہے۔ جو یہاں نہیں آ پاتے یا لندن سے باہر مقیم ہیں وہاں مقامی اسلامک سنٹرز یا مساجد میں عید کی نماز کا اہتمام ہوتا ہے۔ اکثریت تو نماز پڑھ کر واپس اپنے کاموں ہر چلی جاتی ہے اور دوستوں رشتہ داروں سے عید ملنے کے پروگرامز چھٹی والے دن پر چھوڑ دیئے جاتے ہیں یا عید کی شام فیملی ڈنرز کا اہتمام کیا جاتا ہے۔


عید کے بعد بھی کچھ دنوں تک اسلامک سنٹرز میں عید ملن جیسی تقاریب کا اہتمام کیا جاتا ہے جہاں لوگ اہسے ہی جوش و خروش سے جاتے ہیں جس طرح اپنے وطن میں عید کے دن رشتہ داروں اور دوستوں کو ملنے جایا جاتا ہے۔


ایک اچھی بات یہ ہے کہ پچھلے کچھ عرصے سے، لندن سمیت دیگر شہروں میں جہاں مسلم کمیونٹی اکثریت میں ہے ، وہاں سرکاری اداروں  (لوکل کونسلز) کے زیرِ انتظام (اور مسلم کمیونٹی فورم کے تعاون سے) کمیونٹی سنٹرز میں عید ملن فیسٹیولز کا اہتمام کیا جاتا ہے۔ جہاں کھانے پینے، گپ شپ، اسلام کے بارے میں معلومات اور اینٹرٹینمیٹ کے علاوہ کونسل کی طرف سے تعلیم، صحت اور روزگار کے بارے میں معلومات بھی فراہم کی جاتی ہیں۔


تو یہ ہے احوال برطانیہ میں عید کا۔  معذرت کہ تصویروں کا انتظام نہیں ہو سکا کیونکہ عید کی نماز پڑھنے جانے والوں کو  کام پر پہنچنے کی جلدی تھی کسی نے میرے لئے تصویریں نہیں بنائیں :-(   ویسے بھی اگر کوئی تصویر بن بھی جاتی تو اس میں بکرا یا گائے تو پھر بھی موجود نہ ہوتے۔


میری عید انتہائی بور گزری۔ کام کی مصروفیت تو تھی لیکن اس کے ساتھ ساتھ اداسی بھی تھی کیونکہ میری پلاننگ  کے مطابق مجھے عید پاکستان میں کرنی تھی لیکن جانے سے صرف ایک دن پہلے مجھے ٹکٹ کینسل کرانا پڑا :cry: ۔ اور ہاں ہم نے عید والے دن بھی چکن ہی کھایا۔ :D


مزید دو بلاگرز  کو ٹیگ کرنا ہے اور اپنے علاقے سے ہٹ کر ٹیگ کرنا ہے تو میں ماوراء (ناروے)  اور خاور (جاپان)  کو ٹیگ کرتی ہوں۔



مکمل تحریر  »

Monday, 8 December 2008

بھیگی عید


اردو محفل پر شعیب سعید شوبی کا تھریڈ  ’کراچی کی مویشی منڈی‘ دیکھ رہی تھی۔ تصویریں تو بہت ہی اچھی ہیں۔ ان میں سے ایک تو  میں نے اپنے ڈیسک ٹاپ پر لگا لی ہے ۔ شکریہ شوبی برادر۔ :smile




قربانی کے جانور دیکھ کر جو خوشی ہوتی ہے وہ تو اپنی جگہ لیکن ان کی قیمتیں اور وی آئی پی /عوامی جانوروں کی تفریق دیکھ کر پتہ چلتا ہے  کہ ہم لوگ مذہبی تہواروں کے معاملے میں بھی نمود و نمائش اور طبقاتی کلچر کا شکار ہو چکے ہیں۔


ان تصویروں میں مویشی منڈی کے وی آئی پی لاؤنج کی آرائش ایک شادی ہال سے کسی صورت کم نہیں ہے۔ اتنے مہنگے جانور بھی لوگ خریدتے ہی ہوں گے تبھی تو مارکیٹ میں موجود ہیں۔ ایک (آنکھوں دیکھا) واقعہ یاد آ رہا ہے۔ کچھ سال پہلے بقر عید پر ایک صاحب نے شاید ستر ہزار کی ایک گائے خریدی تھی اور عید کا دن آنے تک ان کا معمول تھا کہ شام کو ان کے ڈیرے کی لائٹنگ کی جاتی۔ پھر ڈھما ڈھم ڈھول بجایا جاتا اور رات گئے تک لوگ گائے کی شان دیکھتے آتے۔ یہ بات ہے آج سے پانچ سال پہلے کی۔ معلوم نہیں اب ایسے لوگوں نے کتنے نئے طریقے نکال لئے ہوں گے شو آف کے لئے۔


ایسا لگتا ہے عید بھی صرف امیروں کا تہوار ہی بن کر رہ گئی ہے۔ میرا اندازہ ہے کہ متوسط طبقہ کی اکثریت بھی شاید اب اتنی استطاعت نہ رکھتی ہو کہ قربانی کا جانور خرید سکے۔ جبکہ دوسری طرف ہمارے ہی معاشرے میں ایسے لوگ بھی ملتے ہیں جو کئی کئی لاکھ کے جانور خرید رہے ہیں۔ یہ اور بات ہے کہ ان میں اکثریت صرف دکھلاوے کی شائق ہے، جنہوں کے شاید ہی کبھی قربانی کے فلسفے کو سمجھنے کی کوشش کی ہو۔ ورنہ ظاہری واہ واہ کی طرف توجہ دینے کے بجائے کوئی بلوچستان کے بے گھر و بے آسرا زلزلہ زدگان کی خبر لیتا کہ جو اس سرد ترین موسم میں اپنی حکومت اور اپنے لوگوں کی مدد کے منتظر ہیں۔


ہم لوگ جذبۂ قربانی سے سرشار ہیں۔ مگر  افسوس کہ ہم نے لفظ ‘قربانی‘ کو تو حرزِ جاں بنا لیا ہے لیکن اس کے فلسفے کو بُھلا بیٹھے ہیں یا شاید کبھی سمجھنے کی کوشش ہی نہیں کی۔  ہر ایک کی اپنی تشریح ہے ، اپنا فلسفہ ہے۔



کاش ہم سمجھ سکیں کہ قربانی صرف مہنگے داموں جانور خرید کر اس کے گلے پر چُھری پھیر دینے کا نام نہیں بلکہ وہ جنہیں کم نوازا گیا ہے، ان کا خیال کرنا بھی اس قربانی کا بنیادی جزو ہے۔
کاش وہ بھی کچھ سمجھ سکیں جو اپنے ساتھ ساتھ کئی بے گناہ اور معصوم لوگوں کی جان لے کر یہ سمجھتے ہیں کہ وہ اپنے لوگوں کے لئے قربان ہونے چلے ہیں۔

عید کی خوشیاں اپنی جگہ لیکن اب کے عید اداس کر دینے والے موسم میں آئی ہے۔ پاکستانی قوم قدرتی اور انسانی دونوں آفات کا شکار ہے۔ بلوچستان کا زلزلہ، کراچی کے حالات اور پشاور میں بم دھماکہ۔۔  پتہ نہیں کبھی ہماری آزمائش ختم ہو گی بھی یا نہیں۔  عجیب سی اداسی ہے اور پہلی بار ایسا ہوا ہے کہ عید مبارک کہنا بہت مشکل لگ رہا ہے۔ :cry:


عید کے دن دعا کیجئے گا کہ آنے والی عیدیں ہمارے لئے خوشیوں، امن اور سلامتی کا پیغام لے کر آئیں۔ ثمَ آمین

مکمل تحریر  »

Thursday, 4 December 2008

دل سے۔ ہارون رشید





دل سے میں نے دیکھا پاکستان (ہارون رشید۔ لگن)








مکمل تحریر  »

Saturday, 29 November 2008

سمندر













سمندر


سمندر دُور تک پھیلی ہوئی اک نیلگوں وُسعت


سمندر زندگی ہے


زندگی کا استعارہ ہے


ہواؤں کو نمی دیتا


سمندر!


ساحلوں کا لمس پیتا


ہزاروں سینکڑوں لعل و گوہر


موتی ، صدف پارے


بچھاتا ساحلوں کی ریت پر


اپنے خزانوں کو لُٹاتا


لکھ داتا


سمندر استعارہ ہے سخاوت کا


مکمل تحریر  »

Wednesday, 26 November 2008

آساں نہیں زیست کی منزل سے گزرنا

آساں نہیں زیست کی منزل سے گزرنا


اس راہ میں کچھ مرحلے دُشوار بہت ہیں


پُر درد گزر جائیں تو بے کار ہیں صدیاں


لمحے جو سکوں بخش پوں دو چار بہت ہیں

مکمل تحریر  »

Tuesday, 25 November 2008

جمود









ٹھہرے پانی میں کنکر پھینک کر معمولی حرکت تو پیدا کی جا سکتی ہے، مستقل بہاؤ نہیں۔

مکمل تحریر  »

Friday, 21 November 2008

خفگی نامہ


اگر میں اس مہینے کے شروع میں ‘یہ مہینہ کیسا گزرے گا‘ یا ‘ستاروں کے مطابق‘ قسم کی کوئی پیش گوئی پڑھتی تو مجھے یقین ہے میرے سٹار میں کچھ ایسا لکھا ہوتا۔ ‘یہ مہینہ خفگی سے بھرپور ہو گا۔ قریبی لوگوں کی ناراضگی کا شدید اندیشہ ہے۔ مہینے کے آخر تک حالات میں مزید ابتری کی طرف جا سکتے ہیں‘ وغیرہ وغیرہ۔ اور میرے ساتھ بعینہ کچھ ایسا ہی ہو رہا ہے :quiet:


“تمہارے ماموں کا فون آیا تھا۔ تم نے کتنے دنوں سے ان سے بات نہیں کی؟ ابھی فون کرو اور ویک اینڈ پر ان لوگوں کی طرف چکر لگا لو۔“ بتانے کی ضرورت نہیں کہ ان جملوں پر اکتفا نہیں کیا میری والدہ نے بلکہ ساتھ ٹھیک ٹھاک ڈانٹ سے بھی تواضع ہوئی۔ :cry:


“تم کہاں غائب ہو۔ نہ کوئی فون، نہ ٹیکسٹ، نہ ای- میل۔ اتنی لاپرواہ تو نہیں تھیں تم، دس دفعہ کال کرو تو ایک بار جواب ملتا ہے۔۔۔۔۔میں تم سے شدید ناراض ہوں۔“ اس قسم کی باتیں مجھے آج کل تواتر سے سننے کو مل رہی ہیں۔ اب تو میں شرمندہ ہو ہو کر بھی تھک گئی ہوں۔ :sh حالانکہ میں باقاعدگی سے سب کی خیر خبر رکھتی ہوں۔ اگر کسی وجہ سے کسی کا فون سن نہ سکوں تو پہلی فرصت میں جواب دیتی ہوں۔ لیکن پچھلے کچھ عرصے سے واقعی ایسا ہو رہا ہے۔ وجہ بھی کچھ خاص نہیں سوائے تھوڑی سی مصروفیت کے۔ بہرحال شکر ہے کہ نومبر ختم ہو رہا ہے اور سب کی خفگیاں بھی :)



ان ناراضگیوں کے بارے میں سوچتے سوچتے مجھے احساس ہوا کہ میں خود بھی ان دنوں ہر وقت خفا ہونے کی کوشش میں رہتی ہوں۔روزانہ ہی اتنی باتیں مل جاتی ہیں ناراض ہونے کو۔



صبح جاگو تو موسم دیکھ کر خود بخود موڈ آف ہو جاتا ہے۔ ہر وقت بارش یا گہرے بادل چھائے رہتے ہیں۔ اور اکثر شام سے پہلے ہی شام ہو جاتی ہے۔ سب کام ادھورے رہ جاتے ہیں۔


پاکستانی چینلز آن کرو تو بریکنگ نیوز دیکھ کر خفا ہونا پڑتا ہے۔ اچھا خاصا پروگرام چل رہا ہوتا ہے اور کئی بار تو خبروں میں ہی بریکنگ نیوز یا نیوز الرٹ اڑتا ہوا آتا ہے کہیں سے۔۔اور خبر ہوتی ہے ‘وزیرِ اعظم جلسے کے پنڈال میں پہنچ گئے۔ اب وہ سٹیج کی طرف بڑھ رہے ہیں۔ :o ‘


اس خفگی میں مزید اضافہ ہو جاتا ہے جب اچھا خاصا کام کرتے کرتے موذیلا فائر فاکس کا موڈ آف ہو جاتا ہے اور زرداری انکل کی طرح دھڑلے سے آگے بڑھنے سے انکار ہو جاتا ہے۔ اور میں مسلم لیگ ن کی طرح انتظار ہی کرتی رہ جاتی ہوں۔ جب سے میں نے Kaspersky انسٹال کیا ہے۔ فائر فاکس میں جی میل اور دوسری کچھ سائٹس اتنا مسئلہ کر رہی ہیں۔ بھائی بھی مصروف ہے اور اس بات پر میں پھر خود سے خفا ہو جاتی ہوں کہ میں اتنی نالائق کیوں ہوں۔ کچھ سیکھ لیا ہوتا تو اپنے ہی کام آتا :blush:



اور اب آج کی آخری اور سب سے بڑی ناراضگی اپنے بلاگ سے ہے۔ پتہ نہیں کیا ہوا کہ میرے بلاگ سے Recent Commentsاور Recent Track Backs سب غائب ہو گئے۔ اس کی وجہ بھی میرا ہی کوئی کارنامہ ہو گا شاید۔ اور اب ان کو کیسے واپس لانا ہے یہ مجھے معلوم نہیں۔ اس لئے یہ ناراضگی بھی میری اپنی طرف ہی ری ڈائریکٹ ہو رہی ہے :-s



میں سوچ رہی ہوں کہ میں وہ گانا ڈھونڈ کر اپنی voice mail میں ریکارڈ کر لوں اور خود بھی سارا دن سنتی رہا کروں۔۔ ‘ کسی بات پر میں کسی سے خفا ہوں۔۔۔میں زندہ ہوں پر زندگی سے خفا ہوں۔ :lashbtng ‘

مکمل تحریر  »

Wednesday, 19 November 2008

نظم جوگی (خوشی محمد ناظر)




جوگی


نغمۂ حقیقت



کل صبح کے مطلعِ تاباں سے جب عالم بقعۂ نور ہوا
سب چاند ستارے ماند ہوئے، خورشید کا نور ظہور ہوا
مستانہ ہوائے گلشن تھی، جانانہ ادائے گلبن تھی
ہر وادی وادیٔ ایمن تھی، ہر کوہ پہ جلوۂ طور ہوا
جب بادِ صبا مضراب بنی، ہر شاخِ نہال رباب بنی
شمشاد و چنار ستار ہوئے، ہر سرو و سمن طنبور ہوا
سب طائر مل کر گانے لگے، مستانہ وہ تانیں اُڑانے لگے
اشجار بھی وجد میں آنے لگے، گلزار بھی بزمِ سرُور ہوا
سبزے نے بساط بچھائی تھی اور بزمِ نشاط سجائی تھی
بن میں، گلشن میں، آنگن میں، فرشِ سنجاب و سمور ہوا
تھا دل کش منظرِ باغِ جہاں اور چال صبا کی مستانہ
اس حال میں ایک پہاڑی پر جا نکلا ناظر دیوانہ
چیلوں نے جھنڈے گاڑے تھے، پربت پر چھاؤنی چھائی تھی
تھے خیمے ڈیرے بادل کے، کُہرے نے قنات لگائی تھی
یاں برف کے تودے گلتے تھے، چاندی کے فوارے چلتے تھے
چشمے سیماب اگلتے تھے، نالوں نے دھوم مچائی تھی
اک مست قلندر جوگی نے پربت پر ڈیرا ڈالا تھا
تھی راکھ جٹا میں جوگی کی اور انگ بھبوت رمائی تھی
تھا راکھ کا جوگی کا بستر اور راکھ کا پیراہن تن پر
تھی ایک لنگوٹی زیبِ کمر جو گھٹنوں تک لٹکائی تھی
سب خلقِ خدا سے بیگانہ، وہ مست قلندر دیوانہ
بیٹھا تھا جوگی مستانہ، آنکھوں میں مستی چھائی تھی
جوگی سے آنکھیں چار ہوئیں اور جھک کر ہم نے سلام کیا
تیکھے چتون سے جوگی نے تب ناظر سے یہ کلام کیا
کیوں بابا ناحق جوگی کو تم کس لیے آ کے ستاتے ہو؟
ہیں پنکھ پکھیرو بن باسی، تم جال میں ان کو پھنساتے ہو؟
کوئی جگھڑا دال چپاتی کا، کوئی دعویٰ گھوڑے ہاتھی کا
کوئی شکوہ سنگی ساتھی کا، تم ہم کو سنانے آتے ہو؟
ہم حرص ہوا کو چھوڑ چکے، اِس نگری سے منہ موڑ چکے
ہم جو زنجیریں توڑ چکے، تم لا کے وہی پہناتے ہو؟
تم پُوجا کرتے ہو دھن کی، ہم سیوا کرتے ہیں ساجن کی
ہم جوت لگاتے ہیں من کی، تم اُس کو آ کے بجھاتے ہو؟
سنسار سے یاں مُکھ پھیرا ہے، من میں ساجن کا ڈیرا ہے
یاں آنکھ لڑی ہے پیتم سے، تم کس سے آنکھ ملاتے ہو؟
یوں ڈانٹ ڈپٹ کر جوگی نے جب ہم سے یہ ارشاد کیا
سر اُس کے جھکا کر چرنوں پر، جوگی کو ہم نے جواب دیا
ہیں ہم پردیسی سیلانی، یوں آنکھ نہ ہم سے چُرا جوگی
ہم آئے ہیں تیرے درشن کو، چِتون پر میل نہ لا جوگی
آبادی سے منہ پھیرا کیوں؟ جنگل میں کِیا ہے ڈیرا کیوں؟
ہر محفل میں، ہر منزل میں، ہر دل میں ہے نورِ خدا جوگی
کیا مسجد میں، کیا مندر میں، سب جلوہ ہے “وجہُ اللہ” کا
پربت میں، نگر میں، ساگر میں، ہر اُترا ہے ہر جا جوگی
جی شہر میں خوب بہلتا ہے، واں حسن پہ عشق مچلتا ہے
واں پریم کا ساگر چلتا ہے، چل دل کی پیاس بجھا جوگی
واں دل کا غنچہ کِھلتا ہے، گلیوں میں موہن ملتا ہے
چل شہر میں سنکھ بجا جوگی، بازار میں دھونی رما جوگی
پھر جوگی جی بیدار ہوئے، اس چھیڑ نے اتنا کام کیا
پھر عشق کے اِس متوالے نے یہ وحدت کا اِک جام دیا
اِن چکنی چپڑی باتوں سے مت جوگی کو پھسلا بابا
جو آگ بجھائی جتنوں سے پھر اس پہ نہ تیل گرا بابا
ہے شہروں میں غل شور بہت اور کام کرودھ کا زور بہت
بستے ہیں نگر میں چور بہت، سادھوں کی ہے بن میں جا بابا
ہے شہر میں شورشِ نفسانی، جنگل میں ہے جلوہ روحانی
ہے نگری ڈگری کثرت کی، بن وحدت کا دریا بابا
ہم جنگل کے پھل کھاتے ہیں، چشموں سے پیاس بجھاتے ہیں
راجہ کے نہ دوارے جاتے ہیں، پرجا کی نہیں پروا بابا
سر پر آکاش کا منڈل ہے، دھرتی پہ سہانی مخمل ہے
دن کو سورج کی محفل ہے، شب کو تاروں کی سبھا بابا
جب جھوم کے یاں گھن آتے ہیں، مستی کا رنگ جماتے ہیں
چشمے طنبور بجاتے ہیں، گاتی ہے ملار ہوا بابا
جب پنچھی مل کر گاتے ہیں، پیتم کی سندیس سناتے ہیں
سب بن کے برچھ جھک جاتے ہیں، تھم جاتے ہیں دریا بابا
ہے حرص و ہوا کا دھیان تمھیں اور یاد نہیں بھگوان تمھیں
سِل، پتھر، اینٹ، مکان تمھیں دیتے ہیں یہ راہ بھلا بابا
پرماتما کی وہ چاہ نہیں اور روح کو دل میں راہ نہیں
ہر بات میں اپنے مطلب کے تم گھڑ لیتے ہو خدا بابا
تن من کو دھن میں لگاتے ہو، ہرنام کو دل سے بھلاتے ہو
ماٹی میں لعل گنواتے ہو، تم بندۂ حرص و ہوا بابا
دھن دولت آنی جانی ہے، یہ دنیا رام کہانی ہے
یہ عالَم، عالَمِ فانی ہے، باقی ہے ذاتِ خدا بابا




ترانۂ وحدت



جب سے مستانے جوگی کا مشہورِ جہاں افسانہ ہوا
اُس روز سے بندۂ ناظر بھی پھر بزم میں نغمہ سرا نہ ہوا
کبھی منصب و جاہ کی چاٹ رہی، کبھی پیٹ کی پوجا پاٹ رہی
لیکن یہ دل کا کنول نہ کِھلا اور غنچۂ خاطر وا نہ ہوا
کہیں لاگ رہی، کہیں پیت رہی، کبھی ہار رہی، کبھی جیت رہی
اِس کلجگ کی یہی ریت رہی، کوئی بند سے غم کے رہا نہ ہوا
یوں تیس برس جب تیر ہوئے، ہم کارِ جہاں سے سیر ہوئے
تھا عہدِ شباب سرابِ نظر، وہ چشمۂ آبِ بقا نہ ہوا
پھر شہر سے جی اکتانے لگا، پھر شوق مہار اٹھانے لگا
پھر جوگی جی کے درشن کو ناظر اک روز روانہ ہوا
کچھ روز میں ناظر جا پہنچا پھر ہوش رُبا نظّاروں میں
پنجاب کے گرد غباروں سے کشمیر کے باغ بہاروں میں
پھر بن باسی بیراگی کا ہر سمت سراغ لگانے لگا
بنہال کے بھیانک غاروں میں، پنجال کی کالی دھاروں میں
اپنا تو زمانہ بیت گیا، سرکاروں میں درباروں میں
پر جوگی میرا شیر رہا پربت کی سونی غاروں میں
وہ دن کو ٹہلتا پھرتا تھا ان قدرت کے گلزاروں میں
اور رات کو محوِ تماشہ تھا انبر کے چمکتے تاروں میں
برفاب کا تھا اک تال یہاں یا چاندی کا تھا تھال یہاں
الماس جڑا تھا زمُرّد میں، یہ تال نہ تھا کہساروں میں
تالاب کے ایک کنارے پر یہ بن کا راجہ بیٹھا تھا
تھی فوج کھڑی دیوداروں کی، ہر سمت بلند حصاروں میں
یاں سبزہ و گل کا نظارہ تھا اور منظر پیارا پیارا تھا
پھولوں کا تخت اتارا تھا، پریوں نے ان کہساروں میں
یاں بادِ سحر جب آتی تھی، بھیروں کا ٹھاٹھ جماتی تھی
تالاب رباب بجاتا تھا، لہروں کے تڑپتے تاروں میں
کیا مستِ الست نوائیں تھیں ان قدرت کے مِزماروں میں
ملہار کا روپ تھا چشموں میں، سارنگ کا رنگ فواروں میں
جب جوگی جوشِ وحدت میں ہرنام کی ضرب لگاتا تھا
اک گونج سی چکّر کھاتی تھی، کہساروں کی دیواروں میں
اس عشق و ہوا کی مستی سے جب جوگی کچھ ہشیار ہوا
اس خاک نشیں کی خدمت میں یوں ناظر عرض گزار ہوا
کل رشکِ چمن تھی خاکِ وطن، ہے آج وہ دشتِ بلا جوگی
وہ رشتۂ اُلفت ٹوٹ گیا، کوئی تسمہ لگا نہ رہا جوگی
برباد بہت سے گھرانے ہوئے، آباد ہیں بندی خانے ہوئے
شہروں میں ہے شور بپا جوگی، گاؤں میں ہے آہ و بکا جوگی
وہ جوشِ جنوں کے زور ہوئے، انسان بھی ڈنگر ڈھور ہوئے
بچوں کا ہے قتل روا جوگی، بوڑھوں کا ہے خون ہَبا جوگی
یہ مسجد میں اور مندر میں، ہر روز تنازع کیسا ہے؟
پرمیشر ہے جو ہندو کا، مسلم کا وہی ہے خدا جوگی
کاشی کا وہ چاہنے والا ہے، یہ مکّے کا متوالا ہے
چھاتی سے تو بھارت ماتا کی دونوں نے ہے دودھ پیا جوگی
ہے دیس میں ایسی پھوٹ پڑی، اک قہر کی بجلی ٹوٹ پڑی
روٹھے متروں کو منا جوگی، بچھڑے بِیروں کو ملا جوگی
کوئی گرتا ہے، کوئی چلتا ہے، گرتوں کو کوئی کچلتا ہے
سب کو اک چال چلا جوگی، اور ایک ڈگر پر لا جوگی
وہ میکدہ ہی باقی نہ رہا، وہ خم نہ رہا، ساقی نہ رہا
پھر عشق کا جام پلا جوگی، یہ لاگ کی آگ بجھا جوگی
پربت کے نہ سوکھے روکھوں کو یہ پریم کے گیت سنا جوگی
یہ مست ترانہ وحدت کا چل دیس کی دھن میں گا جوگی
بھگتوں کے قدم جب آتے ہیں، کلجُگ کے کلیش مٹاتے ہیں
تھم جاتا ہے سیلِ بلا جوگی، رک جاتا ہے تیرِ قضا جوگی
ناظر نے جو یہ افسانۂ غم رُودادِ وطن کا یاد کیا
جوگی نے ٹھنڈی سانس بھری اور ناظر سے ارشاد کیا
بابا ہم جوگی بن باسی، جنگل کے رہنے والے ہیں
اس بن میں ڈیرے ڈالے ہیں، جب تک یہ بن ہریالے ہیں
اس کام کرودھ کے دھارے سے ہم ناؤ بچا کر چلتے ہیں
جاتے یاں منہ میں مگر مچھ کے، دریا کے نہانے والے ہیں
ہے دیس میں شور پکار بہت اور جھوٹ کا ہے پرچار بہت
واں راہ دکھانے والے بھی بے راہ چلانے والے ہیں
کچھ لالچ لوبھ کے بندے ہیں، کچھ مکر فریب کے پھندے ہیں
مورکھ کو پھنسانے والے ہیں، یہ سب مکڑی کے جالے ہیں
جو دیس میں آگ لگاتے ہیں، پھر اُس پر تیل گراتے ہیں
یہ سب دوزخ کا ایندھن ہیں اور نرگ کے سب یہ نوالے ہیں
بھارت کے پیارے پُوتوں کا جو خون بہانے والے ہیں
کل چھاؤں میں جس کی بیٹھیں گے، وہی پیڑ گرانے والے ہیں
جو خون خرابا کرتے ہیں، آپس میں کٹ کٹ مرتے ہیں
یہ بیر بہادر بھارت کو، غیروں سے چھڑانے والے ہیں؟
جو دھرم کی جڑ کو کھودیں گے، بھارت کی ناؤ ڈبو دیں گے
یہ دیس کو ڈسنے والے ہیں، جو سانپ بغل میں پالے ہیں
جو جیو کی رکھشا کرتے ہیں اور خوفِ خدا سے ڈرتے ہیں
بھگوان کو بھانے والے ہیں، ایشور کو رجھانے والے ہیں
دنیا کا ہے سُرجن ہار وہی، معبود وہی، مختار وہی
یہ کعبہ، کلیسا، بت خانہ، سب ڈول اسی نے ڈالے ہیں
وہ سب کا پالن ہارا ہے، یہ کنبہ اسی کا سارا ہے
یہ پیلے ہیں یا کالے ہیں، سب پیار سے اس نے پالے ہیں
کوئی ہندی ہو کہ حجازی ہو، کوئی ترکی ہو یا تازی ہو
جب نیر پیا اک ماتا کا، سب ایک گھرانے والے ہیں
سب ایک ہی گت پر ناچیں گے، سب ایک ہی راگ الاپں گے
کل شام کھنّیا پھر بن میں مرلی کو بجانے والے ہیں
آکاش کے نیلے گنبد سے یہ گونج سنائی دیتی ہے
اپنوں کے مٹانے والوں کو کل غیر مٹانے والے ہیں
یہ پریم سندیسہ جوگی کا پہنچا دو ان مہاپرشوں کو
سودے میں جو بھارت ماتا کے تن من کے لگانے والے ہیں
پرماتما کے وہ پیارے ہیں اور دیس کے چاند ستارے ہیں
اندھیر نگر میں وحدت کی جو جوت جگانے والے ہیں
ناظر یہیں تم بھی آ بیٹھو اور بن میں دھونی رما بیٹھو
شہروں میں گُرو پھر چیلوں کو کوئی ناچ نچانے والے ہیں
شاعر: خوشی محمد ناظر:

بشکریہ صریرِ خامۂ وارث

مکمل تحریر  »

Tuesday, 18 November 2008

Flowers are Red!! Zain Bhikha

Just loving it :)




Flowers are Red!!



(watch on youtube)

(Original track by Harry Chapin)



The little boy went first day of school
He got some crayons and started to draw
He put colors all over the paper
For colors was what he saw
And the teacher said.. What you doin' young man
I'm paintin' flowers he said
She said... It's not the time for art young man
And anyway flowers are green and red
There's a time for everything young man
And a way it should be done
You've got to show concern for everyone else
For you're not the only one

And she said...
Flowers are red young man
Green leaves are green
There's no need to see flowers any other way
Than they way they always have been seen

But the little boy said...
There are so many colors in the rainbow
So many colors in the morning sun
So many colors in the flower and I see every one

Well the teacher said.. You're sassy
There's ways that things should be
And you'll paint flowers the way they are
So repeat after me.....

And she said...
Flowers are red young man
Green leaves are green
There's no need to see flowers any other way
Than they way they always have been seen

But the little boy said...
There are so many colors in the rainbow
So many colors in the morning sun
So many colors in the flower and I see every one

The teacher put him in a corner
She said.. It's for your own good..
And you won't come out 'til you get it right
And are responding like you should
Well finally he got lonely
Frightened thoughts filled his head
And he went up to the teacher
And this is what he said.. and he said

Flowers are red, green leaves are green
There's no need to see flowers any other way
Than the way they always have been seen

Time went by like it always does
And they moved to another town
And the little boy went to another school
And this is what he found
The teacher there was smilin'
She said...Painting should be fun
And there are so many colors in a flower
So let's use every one

But that little boy painted flowers
In neat rows of green and red
And when the teacher asked him why
This is what he said.. and he said

Flowers are red, green leaves are green
There's no need to see flowers any other way
Than the way they always have been seen.

But there still must be a way to have our children say . . .



There are so many colors in the rainbow
So many colors in the morning sun
So many colors in the flower and I see every one



There are so many colors in the rainbow
So many colors in the morning sun
So many colors in the flower and I see every one



:smile

مکمل تحریر  »

Friday, 14 November 2008

گڈ گورننس زندہ باد!!!

کچھ دن پہلے ہی ‘ کنڈہ لگانے‘ کی اصطلاح سے تعارف ہوا۔ اور آج وفاقی وزیرِ ‘محنت اور سمندر پار پاکستانی‘ سید خورشید شاہ صاحب کی بدولت اس کا عملی مظاہرہ بھی دیکھنے کو مل گیا جنہوں نے خوب دل کھول کر چراغاں کیا اپنے بیٹے کی شادی کی خوشی میں اور چراغاں کے لئے بجلی حاصل کی کنڈہ لگا کر۔




























:victry Bravo Minister Sahib

مکمل تحریر  »

Tuesday, 11 November 2008

ہنسی کھنکتی ہوئی(نیرہ نور)



ہنسی کھنکتی ہوئی
یا بُجھی بُجھی خوشیاں
ہیں دوستی کی مہک سے
یہ رچی ہوئی گھڑیاں
مزہ انوکھا سا
آتے جاتے لمحوں میں
کتابیں گود میں پھیلی
ہیں کھوئے باتوں میں
رفاقتوں میں خزانہ
جو ہم نے پایا ہے
نہ دل پہ بوجھ ہے کوئی
نہ غم کا سایہ ہے


ہمیں یہ دُھن ہے کہ خوشبو
کو ہم تو دیکھیں گے
یقین ہے کہ ستاروں کو
بڑھ کے چُھو لیں گے
کھلا یہ راز بچھڑنا
بھی تھا بہاروں کو
کسی کے ہاتھ نہیں
چُھو سکے ستاروں کو
کبھی دریچوں میں شمعیں
جو ہم جلاتے ہیں
تو گیت لہجے خیالوں
میں گنگناتے ہیں

مکمل تحریر  »

Monday, 10 November 2008

کمرہٴ امتحان



کمرہٴ امتحان

بے نگاہ  آنکھوں سے دیکھتے ہیں پرچے کو
بےخیال ہاتھوں سے
اَن بنے سے لفظوں پر، انگلیاں گھماتے ہیں
یا سوال نامے کو دیکھتے ہی جاتے ھیں
ہر طرف کن انکھیوں سے بچ بچا کے تکتے ہیں
دوسروں کے پرچوں کو راہ نما سمجھتے ہیں
شاید اسطرح کو ئی راستہ ہی مل جائے
بے نشاں جوابوں کا،کچھ پتا ہی مل جائے
مجھ کو دیکھتے ھیں تو
یوں جواب کاپی پر،
حاشیے لگاتے ھیں، دائرے بناتے ھیں
جیسے انکو پرچے کے سب جواب آتے ھیں

اس طرح کے منظر میں
امتحان گاہوں میں
دیکھتا ھی رہتا ھوں
نِت نئے طریقوں سے آپ لطف لیتا ہوں
دوستوں سے کہتا تھا!

کس طرف سے جانے یہ
آج دل کے آنگن میں اِک خیال آیا ہے
سینکڑوں سوالوں کا ایک سوال آیا ہے
وقت کی عدالت میں
زندگی کی صورت میں
یہ جو تیرے ہاتھوں میں، اک سوال نامہ ہے
کس نے یہ بنایا ہے
کس لئے بنایا ہے
کچھ سمجھ میں آیا ہے؟
زندگی کے پرچے کے
سب سوال لازم ھیں
سب سوال مشکل ھیں!

بے نگاہ آنکھوں سے دیکھتا ہوں پرچے کو
بے خیال ہاتھوں سے
اَن بنے سے لفظوں پر انگلیاں گھماتا ہوں
حاشیے لگاتا ہوں
دائرے بناتا ہوں
یا سوال نامے کو دیکھتا ہی جاتا ہوں!!

امجد اسلام امجد

مکمل تحریر  »

Sunday, 9 November 2008

شاعر ہے رہنما بھی ہے اقبال ہمارا












بچے کی دُعا

لب پہ آتی ہے دُعا بن کے تمنا میری

زندگی شمع کی صورت ہو خدایا میری

دُور دنیا کا مرے دم سے اندھیرا ہو جائے

ہر جگہ میرے چمکنے سے اجالا ہو جائے

ہو مرے دم سے یونہی میرے وطن کی زینت

جس طرح پھول سے ہوتی ہے چمن کی زینت

زندگی ہو مری پروانے کی صورت یا رب

علم کی شمع سے ہو مجھ کو محبت یا رب

ہو مرا کام غریبوں کی حمایت کرنا

دردمندوں سے ضعیفوں سے محبت کرنا

مرے اللہ! برائی سے بچانا مجھ کو

نیک جو راہ ہو اس رہ پہ چلانا مجھ کو

علامہ محمداقبال (رح).




آج نو نومبر ہے۔ ڈاکٹر محمد اقبال کا یومِ پیدائش۔ ویسے عالمِ بالا میں علامہ اقبال افسوس ہی کرتے رہتے ہوں گے کہ ان کے لوگ کیسی نالائق قوم ثابت ہوئے ہیں۔ :shy:


بہرحال۔ اللہ سے بہتری کی امید رکھنی چاہئیے ہمیشہ۔ شاید ہم بھی کبھی فخر کے ساتھ یومِ اقبال منا سکیں۔


مکمل تحریر  »

Friday, 7 November 2008

بس یونہی کچھ!!!



ایک آنٹی سے ملاقات ہوئی۔ ان کا کہنا تھا کہ کافی عرصہ پہلے جب وہ لوگ برطانیہ آئے تو بہت مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔کھانے پینے کے لئے حلال چیزیں آسانی سے نہیں ملتی تھیں۔ اس کے علاوہ گھر سے باہر نکلتے ہی مقامی نسل پرست لوگوں سے پیچھا چھڑانا مشکل ہو جاتا تھا۔ اب تو یہاں آنے والوں کے لئے زندگی بہت آسان ہے۔ کسی قسم کا کوئی مسئلہ نہیں۔

جبکہ میں سوچ رہی تھی کہ

کیا زیادہ مشکل ہے؟

حلال اشیاء کی تلاش یا ہمہ وقت دوسروں کو صفائیاں دینا کہ ہم دہشت گرد اور شدت پسند قوم نہیں ہیں۔

اور

کیا زیادہ تکلیف دہ ہے؟

نسل پرستوں کے منہ سے اپنے لیے ‘پاکی‘ سننا یا پھر اپنے ہی ہم وطنوں کے لبوں سے پاکستان کے لئے ‘دھماکستان‘ اور ‘بمبارستان‘ کے القاب سننا۔

مکمل تحریر  »

Thursday, 6 November 2008

میرے بھی آٹھ مکان!!








ڈفر نے آٹھ مکان سلسلے میں ٹیگ کیا۔ کھیل کے اصول کے مطابق آپ کو یہ فرض کرنا ہے اگر آپ فوراً سے جان مکین جتنے امیر ہو جائیں کہ آپکے پاس 8 مکان ہوں تو آپ کہاں چاہیں گے کہ آپکے یہ آٹھ مکان ہوں؟ اور کیوں؟‘
آپ صرف اسی ملک میں مکان بنا سکتے ہیں جہاں آپ رہتے ہیں اور میک کین بن سکتے ہیں۔ اس ٹیگ پوسٹ کے بعد 8 دوسرے بلاگرز کو ٹیگ کریں اور گھر بنانے کے لئے پراپرٹی کی قیمت کی فکر نہ کریں۔

اس سلسلے کی ایک شرط یہ ہے کہ جس ملک میں آپ رہتے ہوں وہاں ہی مکان بنا سکتے ہیں۔ میں کیونکہ پاکستان اور یوکے کے درمیان شٹل کاک بنی رہتی ہوں تو دونوں جگہ رہائش ہے۔ ویسے بھی :pak کے بغیر میرا گزرا نہیں اس لئے امید ہے کہ اس سلسلے میں مجھے کچھ رعایت دی جائے گی۔ :smile

[شورش سے بھاگتا ہوں ، دل ڈھونڈتا ہے میرا.....ایسا سکوت جس پر تقریر بھی فدا ہو]

یہ رہی میری لسٹ۔

1 . پہلا مکان۔ پاکستان میں اپنے گھر کے پاس ہی۔

آپ چاہے ساؤتھ پول سے بھی ہو آئیں۔ جو خوشی اپنے لوگوں کو دیکھ کر اور ان کے درمیان رہ کر ملتی ہے اس کا کوئی بدل نہیں :) ۔ ویسے ایک وجہ اور بھی ہے وہ یہ کہ کیونکہ میں مکین جتنی امیر(خیالوں میں ہی سہی) ہو رہی ہوں تواردگرد کچھ لوگ تو ہوں جن پر ٹہکا شہکا پڑ سکے۔ :daydream

2. دوسرا کوئٹہ بلوچستان میں۔

مجھے اپنے ہوش میں کوئٹہ جانے کا کبھی موقع نہیں ملا۔ وہاں جانا اور خصوصاً پشین اور حنّہ جھیل کے گردو نواح میں کچھ وقت گزارنا ہمیشہ سے میری وش لسٹ پر رہا ہے۔اللہ تعالیٰ بلوچستان پر آئی مشکلات کو ٹال دے اور اس خطے کی خوبصورتی قائم رکھے۔ آمین :pray

3. لاہور لاہور اے

جب میں پہلی بار لاہور گئی تھی تو مجھےوہاں رہنا بالکل بھی اچھا نہیں لگا تھا۔ یوں لگتا جیسے شہر کے گرد دھویں کی ایک چادر لپٹی ہوئی ہے اور رات کو آسمان اتنا دھندلا دکھائی دیتا۔ لیکن آہستہ آہستہ لاہور میرے پسندیدہ مقامات میں سے شامل ہو گیا۔ اور ایسا شامل ہوا کہ میں نے اپنا تیسرا مکان وہاں بنانے کا سوچ لیا ہے۔ اور بناؤں گی بھی نیو کیمپس کے مضافات میں۔ مجھے لگتا ہے کہ نیو کیمپس واحد ایسی جگہ ہے جہاں آپ دن کے کسی بھی وقت نہر کے کنارے بیٹھ کر مراقبہ بھی کر سکتے ہو اور کسی کی طرف سے کسی قسم کی مداخلت کا امکان نہیں ۔ بلکہ میں سوچ رہی ہوں کہ مکین جتنی امیر ہونے کے بعد میرے سورسز بہت زیادہ ہو جائیں گے تو وہیں یونیورسٹی کی حدود میں ہی جگہ حاصل کی جا سکتی ہے۔ :kool

4. میرا چوتھا ٹھکانہ ہو گا اسلام آباد۔

لوگ اکثر اسلام آباد کو کلف زدہ شہر قرار دے کر دور بھاگتے ہیں۔ لیکن کم از کم مجھے تو خاموش سا، اپنے آپ میں گُم گیانی سا اسلام آباد بہت اچھا لگتا ہے :smile ۔ ویسے تو اسلام آباد کو پسند کرنے کے لئے لوک ورثہ ہی کافی ہے۔اگر رہائش کی جگہ کی بھی چوائس ہو تو میں ایف-7 میں مکان بنواؤں گی۔ جناح سُپر کی وجہ سے :)

5. پانچواں مکان ایبٹ آباد میں۔

آلودگی سے پاک انتہائی پُرسکون جگہ۔ جہاں بولنے سے زیادہ ماحول کی خاموشی کو محسوس کرنے میں مزہ آتا ہے۔ شہری افراتفری سے الگ تھلگ اس جگہ کا اپنا ہی ایک مخصوص مزاج ہے سبک خرام ندی سا۔ ۔ یہاں تو اگر کبھی مجھے مستقل بھی رہنا پڑے تو میں بلا تردد رہ جاؤں۔ :smile

6. چھٹا مکان ہو گا خانس پور میں۔

ہم لوگ خانس پور ایک فیلڈ ٹرپ پر گئے تھے۔ اتنا خوبصورت علاقہ شاید ہی میں نے کبھی دیکھا ہو۔ :) پہلی کرن سے لے کر شام غروب ہونے تک سورج کی روشنی درجنوں رنگ بدلتی ہے۔ دو ہفتے سے زیادہ قیام میں میں یہ فیصلہ نہیں کر سکی کہ وہاں کی صبح زیادہ دلکش ہوتی ہے یا شام۔ بہرحال خانس پور کے گرد و نواح میں بھی ایسی ہی قدرتی خوبصورتی بکھری پڑی ہے۔ ۔ واک کا موڈ ہو تو گھر سے نکلو اور گلیات کی طرف روانہ ہو جاؤ۔ یہاں مری جیسا شور شرابا نہیں ہے بلکہ لگتا ہے جیسے زندگی میں ایک ٹھہراؤ سا آ گیا ہو۔ بالکل جیسے پیٹر پین کا نیور لینڈ ۔ :smile

7. ساتواں نمبر ہے سنٹرل لندن کا۔

کیونکہ پورے لندن میں مجھے یہی جگہ سب سے زیادہ پسند ہے۔ آپ اکیلے بھی ہوں تو بور نہیں ہوتے۔ لندن کی مشہور عمارات اور شخصیات اسی علاقے میں پائی جاتی ہیں۔ ایک وجہ یہ بھی ہے کہ آٹھ مکان بنانے کے بعد ان کے اخراجات بھی تو پورے کرنے ہیں ۔اس لئے سنٹرل لندن میں مکان کا دوسرا فائدہ یہ ہو گا کہ میں اس کو رینٹ پر سے دے دوں گی۔ چونکہ یہ لندن کا مہنگا ترین علاقہ ہے تو پاکستان والے مکانوں کے بجلی اور گیس کے بلز تو بھر سکوں گی۔ :D

8. آٹھواں اور آخری مکان آکسفورڈ میں

انگلینڈ میں میری پسندیدہ ترین جگہ۔ آپ آکسفورڈ میں داخل ہوتے جائیں تو ایسا محسوس ہوتا ہے جیسے آپ تاریخ میں سفر کر رہے ہیں۔جیسے وقت کئی صدیاں پیچھے چلا گیا ہے۔ شہر کا آرکیٹکچر ، مارکیٹس ، لائبریریاں ، باغات ، میوزیم اور سب سے بڑھ کر آکسفورڈ یونیورسٹی ہر ایک جگہ جیسے کہانیاں سناتی ہے۔ :)

چلیں جی۔ خیال چودھری کی ترکیب کے مطابق انتہائی لذیذ پلاؤ تیار ہو گیا ہے:shy: ۔ اسی چکر میں میرا لنچ گول ہو گیا ۔ لیکن خیر آٹھ مکانوں کے لئے ایک وقت کے کھانے کی قربانی کیا معنی رکھتی ہے۔ ویسے میں تو یہ چھوٹی سی لسٹ بنا کر ہی تھک گئی۔ اللہ جانے لوگ حقیقت میں اتنی ڈھیر ساری جائیداد کیسے بنا لیتے ہیں۔

اردو بلاگرز پہلے ہی گنے چنے ہیں۔ آٹھ لوگوں کو ٹیگنا اتنا ہی مشکل لگتا ہے جیسے عالمی برادری میں پاکستان کے حمایتی ڈھونڈنا۔ :shy:










میں مزید شگفتہ ، ماوراء ، ہالہ اور وارث کو ٹیگ کرتی ہوں





برسبیلِ تذکرہ:



اتنی بڑی ان دنیاؤں میں

اپنے نام کی تختی والی ایک عمارت

کتنے دُکھوں کی اینٹیں چُن کر گھر بنتی ہے











مکمل تحریر  »

Monday, 3 November 2008

موجاں ای موجاں !!






وزیرِ اعظم نے
پی ٹی وی کے چیئرمین ڈاکٹر شاہد مسعود
کا استعفیٰ منظور کر لیا (آج ٹی وی)۔
یعنی بالآخر جیت شیری رحمان کی ہوئی۔

تین نومبر کا دن میرے لئے خوشیاں لے کر آیا ہے۔ ہلکا پھلکا محسوس کر رہا ہوں۔ شاہد مسعود (ظاہر ہے یہ تو کہنا ہی ہے آخر کو وزیرِ اعظم کے معاونِ خصوصی جو مقرر ہو گئے ہیں۔ جب وزیرِ مملکت کے برابر عہدہ مل جائے  تو پی ٹی وی کے ایم ڈی کا عہدہ کس کو بھائے گا :daydream



یااللہ! پاکستان پر اپنا رحم فرما۔ آمین


:-s



مکمل تحریر  »

Friday, 31 October 2008

او دیس سے آنے والے بتا! (عابدہ پروین)

او دیس سے آنے والے بتا! : عابدہ پروین

کلام: اختر شیرانی+ احمد فراز








او دیس سے آنے والے بتا


کس حال میں ہیں یارانِ وطن


وہ باغِ وطن فردوسِ وطن


او دیس سے آنے والے بتا




کیا اب بھی وہاں کے باغوں میں


مستانہ ہوائیں آتی ہیں


کیا اب بھی وہاں کے پربت پر


گھنگھور گھٹائیں چھاتی ہیں


کیا اب وہاں کی برکھائیں


ویسی ہی دلوں کو بھاتی ہیں


او دیس سے آنے والے بتا




وہ شہر جو ہم سے چھُوٹا ہے، وہ شہر ہمارا کیسا ہے


سب لوگ ہمیں پیارے ہیں مگر وہ جان سے پیارا کیسا ہے


او دیس سے آنے والے بتا




کیا اب بھی وطن میں ویسے ہی


سر مست نظارے ہوتے ہیں


کیا اب بھی سہانی راتوں کو


وہ چاند ستارے ہوتے ہیں


ہم کھیل جو کھیلا کرتے تھے


کیا اب بھی وہ سارے ہوتے ہیں


او دیس سے آنے والے بتا




شب بزمِ حریفاں سجتی ہے یا شام ڈھلے سو جاتے ہیں؟


یاروں کی بسر اوقات ہے کیا ہر انجمن آرا کیسا ہے


او دیس سے آنے والے بتا




کیا اب بھی مہکتے مندر سے ناقوس کی آواز آتی ہے


کیا اب بھی مقدس مسجد پر مستانہ اذان تھراتی ہے


کیا اب بھی وہاں کے پنگھٹ پر


پنہاریاں پانی بھرتی ہیں


انگڑائی کا نقشہ بن بن کر


سب ماتھے پہ گاگر دھرتی ہیں


اور اپنے گھر کو جاتے ہوئے


ہنستی ہوئی چہلیں کرتی ہیں


او دیس سے آنے والے بتا




مہران لہو کی دھار ہُوا


بولان بھی کیا گُلنار ہوا


کس رنگ کا ہے دریائے اٹک


راوی کا کنارہ کیسا ہے


اے دیس سے آنے والے مگر تم نے تو نہ اتنا بھی پوچھا


وہ کَوی جسے بن باس ملا، وہ درد کا مارا کیسا ہے



او دیس سے آنے والے بتا



کیا اب بھی کسی کے سینے میں


باقی ہے ہماری چاہ بتا


کیا یاد ہمیں بھی کرتا ہے


اب یاروں میں کوئی آہ! بتا


او دیس سے آنے والے بتا


للہ بتا للہ بتا


او دیس سے آنے والے بتا

مکمل تحریر  »

Thursday, 30 October 2008

زندگی

ساتھ چلنے والے جب


ساتھ چھوڑ جاتے ہیں


http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/story/2007/11/071109_suicide_timeline.shtml

















وقت تھم نہیں جاتا


کوئی مر نہیں جاتا


کوئی مر بھی جائے تو


زندگی نہیں رُکتی





اکتوبر 2005






راستوں کو چلنا ہے


راستے تو چلتے ہیں


یار دوست ملتے ہیں


زخم ایسے سلتے ہیں


گرد گرد لمحوں میں


عُمر کٹ ہی جاتی ہے


کچھ مُسافروں کو بس


منزلیں نہیں ملتیں!!!









مکمل تحریر  »

Tuesday, 28 October 2008

ذرا پہچانئے!!



Enlarged Image




کل مجھے ایک ای میل میں یہ تصویر ملی ہے۔۔ بھیجنے والی کے مطابق وہ اس میں پچاس سے زیادہ مشہور لوگوں کو پہچان چکی ہے۔ میں نے کوشش کی تو پتہ چلا کہ میں تقریباً 30 کے قریب لوگوں کو پہچانتی ہوں۔ کچھ کے چہرے کہیں دیکھے ہوئے لگتے ہیں لیکن ذہن میں نہیں آ رہا۔مجھے ان میں چارلی چپلین، آئن سٹائن، مہاتما گاندھی، صدام حسین، ملکہ الزبتھ دوئم، مارگریٹ تھیچر، ولادی میر لینن ، بروس لی ، افلاطون، سقراط، ارسطو، بل کلنٹن، ولیم شیکسپیئر، ابراہم لنکن، ایلوس پریسلے، مارلن منرو،سٹالن ، علامہ اقبال (مجھے لگا جیسے یہ اقبال ہی ہیں :blush: )، ماؤزے تنگ، ، انور سادات، ایڈولف ہٹلر، نپولین، چنگیز خان ،  مائیک ٹائی سن  ، پیلے (ساکر پلیئر) ، مدر ٹریسا، نیلسن منڈیلا، دانتے :-s ، ولادی میر پیوٹن، شہزادہ چارلس، بروس لی، یاسر عرفات، فیدل کاسترو، چی گویرا نظر آ رہے ہیں۔ایک چہرہ کم ال سنگ جیسا لگ رہا ہے۔ صدام حسین کے ساتھ والی شخصیت بھی کچھ دیکھی لگ رہی ہے۔ کوئی اور صورت واقف نظر آئی تو لسٹ اپڈیٹ ہوتی جائے گی۔دائیں طرف آخر میں پیچھے مڑ کر دیکھتا ہوا بندہ اسامہ بن لادن جیسا دکھ رہا ہے اور اس سے آگے ٹیلی سکوپ اٹھائے جارج بش جیسا

میں تو بہت نالائق ہوں اس لحاظ سے :shy:

مکمل تحریر  »

Wednesday, 22 October 2008

ٹینا فے بطور سارہ پیلن

امریکہ کے صدراتی الیکشن میں میری دلچسپی اتنی ہی ہے جتنی کسی پاکستانی کی ہونی چاہئیے کہ انیس بیس کے فرق سے ہمارے لئے ہر سربراہ کی پالیسیز تقریباً ایک سی ہی ہیں۔ اس کے باوجود صدارتی مہم اور امیدواروں سے متعلق خبریں میں بڑے ذوق و شوق سے سنتی اور دیکھتی ہوں۔ پہلے اس کی وجہ 'The Daily Show with Jon Stewart' تھا اور پھر سارہ پیلن کے میدان میں آنے کے بعد ‘ٹینا فے‘ کا Saturday Night Live ۔۔ کیونکہ ان دونوں پروگرامز میں جس طرح ان کے بیانات اور مہم کا پوسٹ مارٹم کیا جاتا ہے اگر آپ کو پتہ نہ ہو کہ کس تناظر میں بات ہو رہی ہے تو مزہ نہیں آتا۔ ڈیلی شو میں تو پوری ٹیم کا کام دیکھنے والا ہوتا ہے لیکن Saturday Night Live میں سب سے مزے کا سیگمنٹ وہ ہوتا ہے جہاں ٹینا فے کو سارہ پیلن کے طور پر ایکٹنگ کرنی ہوتی ہے۔ جب جان میکن نے سارہ پیلن کو اپنی نائب صدر کے طور پر نامزد کیا تو اکثر لوگوں نے ٹینا اور سارہ پیلن کی مشابہت کا ذکر کرنا شروع کیا




www.huffingpost.com

اور پھر جب SNL میں ٹینا فے نے سارہ پیلن کو کاپی کرنا شروع کیا تو واقعی اصل اور نقل میں فرق بتانا مشکل ہو جاتا تھا۔



خصوصاً اس ہفتے کا پروگرام تو بہت ہی مزے کا تھاخصوصاً اس ہفتے کا پروگرام تو بہت ہی مزے کا تھا کہ سارہ پیلن بنفسِ نفیس خود پروگرام میں شامل تھیں :D

30 Rock سے SNL تک ٹینا نے ہمیشہ ایک سے بڑھ کر ایک پرفارمنس دی ہے۔ ٹینا فے از سو گڈ۔

یہ پروگرامز دیکھتے ہوئے مجھے اکثر امریکہ میں پاکستانی سفیر ‘حسین حقانی‘ کا خیال آ جاتا ہے۔ کچھ عرصہ قبل جیو ٹی وی پر شاید ڈاکٹر شاہد مسعود کے کسی پروگرام کا کلپ چلتا تھا جس میں حسین حقانی یہ کہتے ہوئے دکھائی دیتے تھے کہ امریکہ یا دوسرے ممالک میں کہیں بھی سیاست دانوں کا اس طرح مذاق نہیں اڑایا جاتا جس طرح پاکستان میں میڈیا کرتا ہے۔ لگتا ہے جیسے انہیں امریکہ میں اپنی مصروفیت کی وجہ سے کبھی ٹیلیویژن دیکھنے کا موقع نہیں ملا ۔

مکمل تحریر  »

Thursday, 9 October 2008

آگہی

8 اکتوبر 2005 کی اُس صبح میں نے پہلی بار جانا کہ اپنی طرف بڑھتی آنے والی موت کی آہٹ کا احساس کیسا ہوتا ہے!



 

مکمل تحریر  »

Wednesday, 1 October 2008

لطیفہ






حکومتِ پاکستان ایک خاتون کو سٹیٹ بنک آف پاکستان کا سربراہ تو بنا دیتی ہےلیکن بنک سے متعلقہ معاملات میں عورت کو گواہ کے طور پر قبول نہیں کرتی۔ واہ :haha:





تفصیل

مکمل تحریر  »

اختتامِ رمضان



ماہِ رمضان ختم ہو گیا اور اتنی جلدی ہوا کہ پتہ ہی نہیں چلا۔ ہوش سنبھالنے کے بعد شاید میرا یہ پہلا رمضان تھا جس میں میں بالکل فارغ تھی۔ پڑھائی، اسائنمنٹس، کام وغیرہ کچھ بھی نہیں۔ روزوں میں باقاعدگی کی عادت تو بچپن سے ہی ہے۔ اس بار اس کے علاوہ بھی بہت کچھ کرنے کا وقت مل گیا۔ سو جی بھر کے وہ سب کام کئے جو مصروفیت پہلے کرنے نہیں دیتی تھی۔ خوب سوئی، کب سے شروع کی ہوئی کتابیں ختم کیں اور سب سے بڑھ کر کتنے سالوں بعد باقاعدگی سے ٹیلی ویژن دیکھا۔ ایسے موقعوں پر اماں پنجابی کا کچھ ایسا ہی محاورہ بولتی ہیں کہ ‘ اَنھے (اندھے) ہو گئے تے سون (سونے کی) دیاں موجاں‘ ۔ نیا کام یہ ہوا کہ زندگی میں پہلی بار سحری خود بنانی پڑی۔ ورنہ تو زیادہ سے زیادہ یہ ہوتا تھا کہ برتن لگا دیئے یا سحری کے بعد کچن سمیٹ دیا۔ ہاں افطار میں اماں اور بھابھی کے ساتھ مدد ضرور کرتی تھی۔ لیکن اس بار تو سب کچھ خود کرنا پڑا۔ لوگوں کو تو نانی یاد آتی ہیں لیکن مجھے یہاں بھی امی ہی یاد آئیں :) ۔ جس جس کو پتہ چلتا ہے کہ میں سحری میں پراٹھے بناتی رہی ہوں ، اس کے حیرت کے مارے بیہوش ہونے میں کوئی کسر باقی نہیں رہتی۔ کیونکہ اس سے پہلے میں نے زندگی میں کبھی پراٹھا نہیں بنایا۔

اکثر پاکستان میں ایسا ہوتا تھا کہ لوگ لاؤڈ سپیکر پر چندے کی اپیل کر رہے ہیں اور جب کسی نے کوئی رقم دی تو اس کے نام کے ساتھ اعلان کیا کہ فلاں نے اتنے روپے چندہ دیے ہیں۔ ہم ان کے حق میں دعائے خیر کرتے ہیں۔ بالکل ایسے ہی یہاں بھی یہ کام شروع ہے۔ اور اس بار تو حد ہو گئی مشرومنگ والا حساب۔ لاتعداد ادارے میدان میں آ گئے ہیں۔ اور پہلے یہ ہوتا تھا کہ ایک آدھ چینل جس کے قیام کا اصل مقصد ہی اس طرح پیسہ اکٹھا کرنا لگتا ہے ، ان اداروں کے پروگرام چلاتے تھے۔ لیکن اس بار یہاں کے تقریباً تمام پاکستانی چینلز پر یہ کام دھڑلے سے کیا گیا۔ حتیٰ کہ پی ٹی وی گلوبل پر بھی دو دو گھنٹوں کے لائیو پروگرام چلائے گئے جس میں اداکاروں اور گلوکاروں سے چندے کے لیے اپیل کرائی گئی۔ اتنی اپیلیں تو میں نے 2005 کے زلزلے کے بعد پاکستان میں بھی کسی چینل پر نہیں دیکھیں۔ رمضان ختم ہوا، اب ایک بار ذی الحج کے دس دن یہ لوگ پھر دکھائی دیں گے اور پھر پورا سال کوئی خیر خبر نہیں کہ کہاں، کیا اور کتنا کام کیا چیریٹی کا۔

dawn news






یہاں کچھ لوگوں نے آج سعودی عرب کے ساتھ عید منائی۔ جب کہ مون سائٹنگ کے مطابق عید کل بدھ کو بنتی ہے چنانچہ اس بار ہم بھی پاکستان کے ساتھ عید منائیں گے :)۔ میری طرف سے سب کو بہت بہت عید مبارک ہو۔ اللہ تعالیٰ مسلم امہ اور پاکستان کی مشکلات آسان فرمائے اور ہمیں صحیح معنوں میں عید منانے کی توفیق عطا فرمائے (آمین)۔


مکمل تحریر  »